”خ و ن کی کمی کی پندرہ خاموش نشانیاں“

خون کی کمی کی شکایت اکثر لوگوں کو ہوتی ہے اور اس کو دور کرنے کےلیے لوگ کئی طرح کی ادویات کا استعمال کرتے ہیں تاکہ ان کی خون کی کمی پوری ہوجائے۔ادویات کے علاوہ بھی خون کی کمی کو پھل اور سبزیوں کے ذریعے سے پورا کیا جاسکتا ہے۔خون میں ریڈ بلڈ سیلز کی کمی کے باعث جسم میں خون کی کمی ہونے لگتی ہے۔ یہ سیلز جسم کے ٹیشیوز کو آکسیجن فراہم کرنے میں مددگار ثابت ہوتے ہیں۔ہماری ناقص غذا کے باعث جسم میں خون کی کمی ہونا شروع ہوجاتی ہے۔ جب جسم میں پوری مقدار میں آئرن، وٹامن بی 12 نہیں پہنچ رہا ہوتا ہے تو جسم میں خون کی کمی ہونا شروع ہوجاتی ہے۔خون کی کمی کی چند علامات ہوتی ہیں، جن سے ظاہر ہوجاتا ہے کہ جسم میں خون کی کمی بڑھتی جارہی ہے۔:وہ علامات کون سی ہیں، آیئے جانتے ہیں۔خون کی کمی کی سب سے بڑی علامت یہ ہے کہ لوگوں کو عجیب چیزیں کھانے کا دل چاہنے لگتا ہے۔ جیسے کاغذ، چالک اور سب سے زیادہ لوگوں کو برف کھانے کا دل چاہتا ہے۔اگر آپ کے ناخنوں کی شکل خراب ہوتی جارہی ہےتو فوراً اپنے معالج کے پاس جائیں۔

کیونکہ ناخنوں کا خراب ہونا خون کی کمی کی علامت ہے۔اگر آپ کو اپنے ہاتھوں اور پاؤں میں بیٹھے بیٹھائے سنسناہٹ محسوس ہوتی ہے تو اس کا مطلب ہے کہ آپ میں خون کی کمی ہے۔ ہاتھوں اور پاؤں میں سنسناہٹ وٹامن بی 12 کی کمی کے باعث ہوتی ہے، اس کے علاوہ ہاتھوں اور پاؤں کا سن ہوجانا بھی خون کی کمی کو ظاہر کرتا ہے۔اگر آپ کے ہونٹ سردیوں کے علاوہ بھی پھٹتے ہیں اور خشک رہتے ہیں تو اس کا مطلب آپ کے جسم میں خون کی کمی ہے۔ جن افراد میں آئرن کی کمی ہوتی ہے، ان کے ہونٹ پھٹنا شروع ہوجاتے ہیں۔جب جسم میں خون کی کمی بڑھ جاتی ہے تو آپ کو بے وجہ کی کاہلی اور سستی محسوس ہونے لگتی ہے۔ چونکہ جسم میں آکسیجن کی کمی ہوجاتی ہے جس کی وجہ سے آپ کو بلاوجہ سستی اور کاہلی محسوس ہونے لگتی ہے۔اگر آپ کی جلد دن بہ دن زرد اور پیلی ہوتی جارہی ہے تو اس کے پیچھے راز یہ ہے کہ آپ میں خون کی کمی ہوتی جارہی ہےاور اگر آپ کی آنکھیں سوجی رہتی ہیں اور آنکھوں کےگرد سیاہ حلقے ہیں تو یہ بھی خون کی کمی کو ظاہر کرتے ہیں۔

Sharing is caring!

Comments are closed.