”فرشتے نے کہا خوشخبری ہو اس کے لیے جو یہ دعا تین بار پڑھے ہر دعا ، ہرحاجت فوراً قبول“

جب آپ عمل کریں اور آپ کا دل مطمئن رہے کہ جو عمل کرنے جارہاہوں یا جارہی ہوں کیا وہ واقعی مستند ہے۔ اور اس کے دلائل کو غور سے پڑھیں۔ کیونکہ بہت ہی خوبصورت روایت ہے جس میں حضرت انس رضی اللہ عنہ نے یہ عمل بتایا ہے

انشاءاللہ ! جب آپ مکمل طورپر پڑھیں گے تو وظیفہ سے مکمل مستفید بھی ہوسکیں گے ۔ عمل کیا ہے ؟ عمل یہ ہے کہ سب سےپہلے آپ نے باوضو ہونا ہےاور چاررکعت نفل نماز پڑھنی ہے۔ اور اس کے لیے کوئی بھی وقت مقرر نہیں ہے بس زوال کے وقت یہ عمل نہ کریں۔ اس کے علاوہ جب بھی آپ کو کوئی ضرورت یا حاجت درپیش ہو تو تب آپ یہ عمل کریں گے

تو اللہ کے حکم سے آپ کی حاجت آپ کی وہ ضرورت آپ کی وہ دعا اسی وقت اللہ تعالیٰ قبول فرمالیں گے ۔ تو کرنا کیا ہے باوضو ہوکر آپ نے چاررکعات نفل نماز پڑھنی ہے۔ آپ چاررکعت نفل اکٹھی بھی پڑھ سکتے ہیں ۔ اگر دو دو رکعت کرکے آسانی لگ رہی ہے تو آپ دو دو رکعت کرکے ادا کرسکتے ہیں۔ جیسے عام نماز پڑھی جاتی ہے نفلی نماز بھی اسی طرح سے پڑھنی ہے۔

اس کا کوئی طریقہ کا ر یا سورتیں وغیرہ اس میں شامل نہیں کرنی ہیں۔ اس کے بعد آپ نے یہ کلمات نہایت یکسوئی اور دل کے یقین کے ساتھ پڑھنے ہیں۔ آپ نے یہ کلمات آپ نے تین مرتبہ پڑھنے ہیں۔ وہ کلمات “یا ودو دیاذالعرش المجید یا فعال لما یرید اسلک بعزتک التی لا ترام و ملکک الذی لا یضام وبنورک الذی ملا ارکان عرشک ان تکفینی شر ھذا لص یا مغیث اغثنی ” ہیں۔ یہ وہ کلمات ہیں جن کو آپ نے تین مرتبہ پڑھنا ہے۔ اور اس کے بعد آپ نے اللہ کے حضور میں دعا کرنی ہے۔ انشاءاللہ! آپ خود دیکھیں گے کہ کس طرح اللہ تعالیٰ آپ کی مدد فرماتے ہیں۔

اور اب وہ دلیل اور روایت بتارہے ہیں جو کہ حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے منقول ہے ۔ حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں حضوراکرمﷺ کے ایک صحابی جن کی کنیت ابو معلک تھی وہ تاجر تھے ۔ اپنے اور دوسروں کے مال سے تجار ت کیا کرتے تھے ۔ وہ بہت عبادت گزار اور پرہیز گزارتھے ایک مرتبہ وہ سفرمیں گئے انہیں راستے میں ایک ہتھی،۔اروں سے مسل۔ح ایک ڈاک۔و ملا۔ اس نے کہا اپنا سارا سامان رکھ لو۔ اس صحابی نے کہا تمہیں مال لینا ہے تو وہ لے لو۔ ڈاکو نے کہا نہیں ! میں تمہاراخ۔ون بہانا چاہتا ہوں۔

اس صحابی نے کہا مجھے ذرا سی مہلت دو میں نماز پڑھ لو۔ اس نے کہا جتنی پڑھنی ہےپڑھ لو۔ چنانچہ انہوں نے وضو کرکے نماز پڑھی۔ اور یہ دعا جو آپ کو بتائی گئی ہے۔ یہ دعا انہوں نے تین مرتبہ مانگی ۔ یعنی چاررکعات نفل پڑھ کر اس کے بعد یہ دعا مانگی ۔ جب انہوں نے دعا مانگی تواچانک گھوڑ سوار نمودار ہوا جس کے ہاتھ میں ایک نی۔ز ہ تھا۔ جسے اٹھاکر وہ اپنے گھوڑے کے کانوں کے درمیان بلند کیے ہوئے تھے ۔ اس نے ڈاک۔و کو نی۔زہ م۔ار کر ق ت ل کردیا۔ اور پھر تاجرکی طرف متوجہ ہو ۔تاجر نے پوچھا تم کون ہو؟

اللہ نے تمہارے ذریعے سے میری مدد فرمائی ہے۔ اس نے کہا میں چوتھے آسمان کا فرشہ ہوں جب آپ نے پہلی مرتبہ یہ دعا کی میں نے آسمان کی دروازوں کی کھ۔ڑاہٹ سنی۔ جب آپ نے یہ دوبارہ دعا کی میں نے آسمان والوں کی چی۔خ و پک۔ار سنی پھرآپ نے تیسری مرتبہ دعا کی تو کسی نے کہا یہ ایک مصیبت زدہ کی دعا ہے۔ یہ ایک ضرورت مند کی دعا ہے ۔

میں نے اللہ کی بارگاہ عرض کیا اس ڈاک۔وکو ق ت۔ل کرنے کام میرے ذمہ کردیں۔ پھر اس فرشتے نے کہا آپ کو خوشخبری ہو کہ جو آدمی وضو کرکے چاررکعت نفل پڑھے اور پھر دعا مانگے اور اس کی دعا ضرور قبول ہوگی۔ چاہے وہ مصیبت زدہ ہو یا نہ ہو۔ اس کی دعا انشاءاللہ! اس عمل کی برکت سے ضرور با ضرور پوری ہوگی

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *